Friday, September 25, 2015

Tehrik-i Taliban Pakistan (Fazlullah Faction) Statement on Pakistan Government Lies & the Reality of the Attack on the Badaber Airport





پاکستان ائیرفورس بیس پر حملہ ۔۔۔۔ آئی ایس پی آر کے جھوٹے دعوے ۔۔۔۔ اور حقیقت

۱۔        طالبان حملہ آورعام سوزوکی گاڑی میں آئے ۔گاڑی کا چیسس نمبر حاصل کرلیا گیا۔       آئی ایس پی آر
محمد خراسانی۔    طالبان دو وی آئی پی گاڑیوں کے ذریعے کیمپ میں داخل ہوئے اور اب تک حکومت کو ان گاڑیوں کے بارے میں بالکل پتہ نہیں چل سکا ہے۔
کیونکہ آپ 14 افراد جو بھاری ہیھتیاروں سے لیس ہوں ایک سوزوکی میں بٹھا کر کس طرح ہائی سیکیورٹی زون میں داخل کرسکتے ہیں ؟کیا پوری کے پی کے سیکیورٹی سوئی ہوئی تھی؟ کیا تمام چیک پوائینٹس پر ڈیوٹی دینے والے لوگ اندھے تھے؟
۲۔      طالبان حملہ آوروں ملیشیاء کی وردی میں ملبوس تھے اور سفید جوتے پہن رکھے تھے۔     آئی ایس پی آر
محمد خراسانی ۔   جب حملہ پی اے ایف بیس پر تھا تو ملیشیا کی وردی کیو ں پہنی تھی؟کیا ملیشیا فورسز سفید جوتے پہنتے ہیں؟یا اتنا منظم حملہ کرنے والے بے وقوف تھے؟ کیا ملشیا فورسز آج کل سوزوکی میں پھرتے ہیں۔ آئی ایس پی آر نے ان خبروں میں بے وقوفی کی انتہا کردی۔
۳۔    جن حملہ آوروں کو مارا گیا ان کے پاس ائیرفورس کے جعلی سروس کارڈ تھے۔                 آئی ایس پی آر
محمد خراسانی۔   اگر سروس کارڈ پی اے ایف کے تھے تو وردی ملیشیا کی کیوں پہن رکھی تھی؟ اور اگرپی اے ایف کارڈ تھے تو ظاہر ہے وردی بھی ائیر فورس بیس کے مطابق ہی تھی۔ اور گاڑیاں بھی ۔ جنھیں کسی نے کہیں پر بھی نہیں روکا۔ اور شاید وہ واپس نکلنے میں بھی کامیاب ہوئے ہیں ۔ کیوں کہ اب تک حملے میں استعمال ہونے والے دو گاڑیوں کا کوئی ثبوت آئی ایس پی آر  کے پاس نہیں ،
۴۔     تمام 13 دہشت گردوں کو ہلاک کردیا گیا ہے        آئی ایس پی آر
محمد خراسانی ۔   14 فدائیوں میں سے جن کی ویڈیو ہم جاری کرچکے ہیں کسی ایک کی تصویر کو کیوں اب تک جاری نہیں کیا گیا، جن تصویروں کو شایع کیا گیا یا تو وہ پرانے ہیں یا پھر قیدیوں کو شہید کیا گیا ہے آخری رابطے کے مطابق جو دن 1 بجے کے قریب کیا گیا میں ایک فدائی نے250 سے زائد افراد کو ہلاک کرنے کے بارے میں خبر دی اور صرف ایک فدائی جس نے اپنے آپ کو بلاسٹ کیا تھا یعنی اسکا کوئی ثبوت نہیں مل سکتا کہ اس کے پاس کونسا کارڈ ہے اور کس رنگ کی وردی پہن رکھی ہے اور آخری بات جو اس نے بتائی کہ ہم تیرا ساتھی ٹھیک ہیں اور اب تقسیم ہوکر لڑیں گے وغیرہ وغیر ہ
تو میرا سوال ہے کہ اب تک ایک لاش کو ہی دکھادیں جن کو مارا گیا ہو اورصحافیوں کو کیمپ کے اند ر اب تک کیوں نہیں چھوڑا گیا تاکہ اصل صورت حال واضح ہوجائے۔ 14 بڑے بم جو ایک گاڑی میں فدائین لے کر گئے اور بلاسٹ کئے گئے کیا وہ کچھ بھی نقصان نہیں کر سکے؟
۵۔      دہشت گردوں کو پہلے تین سیکورٹی لئیرز میں  50 میڑ کے اندر قابو کیا گیا ۔     آئی ایس پی آر
محمد خراسانی۔    اگر 50 میٹر کے اندر انہیں قابو کیا گیا تو وی آئی پی دو گاڑیا ں کہاں گئیں اور اسی احاطے میں انہوں اتنے زیادہ لوگوں کو کیسے مارا ؟ اور ان کے مطابق جن 13 فدائیوں کو مارا گیا ان کی کوئی ایک لاش کوئی ایک اصل ثبوت ان کے پاس ہے تو دکھاتے کیوں نہیں ، اور ابھی تک میڈیا کے لوگوں کو اندر جانے کیوں نہیں دیا جارہا ؟
۶۔      پورے اپریشن کو کی ترتیب اور کنٹرول افغانستان سے ہوا۔             آئی ایس پی آر
محمد خراسانی ۔  اس قسم کی باتیں جعلی ہیں،  کیونکہ سب جانتے ہیں پاکستان کے 40 کلومیٹر اندر تک افغانستان کے سگنل کام کرتے ہیں ۔ اور 40 کلومیٹر اندر تک افغانستان میں پاکستان کے سگنل کام کرتے ہیں ۔ یہ کوئی خاص ثبوت یا بات نہیں۔
لیکن پاکستان کے بلند وبانگ دعوے کہاں گئے جس میں کہا گیا فنگر پرنٹس کے بغیر یہ کوئی سم نہیں کھلوا سکے گا تو پی اے ایف بیس سے رابطہ کونسے نبمر سے ہوا؟ کیا وہ افغان سم تھے ؟ کیا آئی ایس پی آر یا اینٹیلجنس ادارےان سموں کی شناخت نہیں کرسکتے وغیرہ وغیر ؟
یہ تمام باتیں حکومت پاکستان کی مکمل ناکامی کی طرف اشارہ ہے ۔اور طالبان الحمد للہ آج مکمل منظم ہیں ۔

No comments: