Sunday, September 14, 2014

Tehrik-i Taliban Pakistan Statement about the Prisoner Exchange for Ajmal Khan, Vice Chancellor of Islamia College Peshawar







 



A Statement about the Release of Three Prominent Brothers of Tehrik-i-Taliban Pakistan
in Exchange for Releasing the Vice Chancellor of the College in Peshawar

بسم اللہ الرحمن الرحیم


The Vice Chancellor of Islamia College has been released in exchange for the release of three prominent brothers of Tehrik-i-Taliban Pakistan.

Dr. Ajmal Khan, the Vice Chancellor of Islamia College in Peshawar, was captured four years ago by the Mujahideen of Tehrik-i-Taliban Pakistan. The utmost of comfort was provided for Ajmal Khan due to his age and health, and he did not have any shortage in medication, food, and appropriate clothing, as Tehrik-i-Taliban Pakistan considers the fullfilment of prisoner rights a religious duty.

Tehrik-i-Taliban demanded the release of five of its imprisoned brothers from the Pakistani government, but the Awami National Party did not show any interest in the release of the Vice Chancellor because of family ties. Not only did it suspend the case without any reason, but it put his life in danger by executing two of the imprisoned brothers whose names appeared on the list of the central intelligence, the “ISI”.

In the meantime, the family of Ajmal Khan and some of non-governmental people offered a large sum of money to Tehrik-i-Taliban in exchange for his release. We refused the offer, because Tehrik-i-Taliban considers the situation of Ajmal Khan to be a government issue only, and there is no moral reason to involve his family and relatives in it.

The negotiations with the current government were ongoing for a long time. We made our demands, and most important was the release of three of our brothers. The government met these demands in stages over a full year. When the third brother, “Izhar Khan,” was released, Tehrik-i-Taliban released Ajmal Khan according to the agreement.

Shahidullah Shahid
Official Spokesman for Tehrik-i-Taliban Pakistan
(30-8-2014)




بسم الله الرحمن الرحيم

حركة طالبان باكستان
تحريکِ طالبان پاکستان
Tehrik-i-Taliban Pakistan

____________________________________

بيان وصور عن تحرير ثلاث إخوة بارزين لحركة طالبان باكستان مقابل إطلاق سراح نائب عميد الجامعة بيشاور

پروفیسر اجمل خان کے بدلے تین اہم ساتھیوں کی رہائی

A Statement and Photos about the Release of Three Prominent Brothers of Tehrik-i-Taliban Pakistan
in Exchange for Releasing the Vice Chancellor of the College in Peshawar

البيان بثلاثة لغات: العربية والأردية والإنجليزية

----------------

بسم الله الرحمن الرحیم

تم إطلاق سراح نائب عميد الجامعة الإسلامية مقابل الافراج عن ثلاث إخوة بارزين لحركة الطالبان باكستان.

كان نائب عميد الجامعة بيشاور الاسلامية الدكتور أجمل خان منذ أربع سنوات أسيرا لدى مجاهدي حركة الطالبان باكستان .وقد تم توفير الراحة بكل الوسائل المتاحة لأجمل خان حسب ما يقتضيه عمره وصحته ، ولم يواجه أبدا نقصا في الأدوية والغذاء والملابس المناسب ؛ فحركة طالبان باكستان تعتبر أداء حقوق الأسرى فريضة دينية.

وقد طالبت الحركة طالبان من الحكومة الباكستانية مقابل الافراج عنه إطلاق سراح خمسة من إخوانها المأسورين ، لكن حكومة حزب عوامي الوطني لم تبدي أي اهتمام لإطلاق سراح نائب العميد بسبب العلاقات العائلية، و علقت القضية دون أي سبب ،بل قامت بوضع حياة العميد متعمدا في خطر عبر إعدام اثنين من الاخوة المأسورين الذين ورد أسماؤهم في القائمة بأيدي الاستخبارات المركزية " آئي ايس آئي ".
وأثناء ذلك ، حاول بعض الناس الغير الحكوميين وعائلة أجمل خان بتقديم مبالغ ضخمة لحركة طالبان مقابل الافراج عن أجمل خان ، لكننا رفضنا هذا العرض ، لأن حركة طالبان تعتبر أن قضيةأجمل خان هي قضية الحكومة والنظام فقط ،ولا يوجد أي مبرر أخلاقي في توريط عائلته وأقرباؤه في هذه القضية .

كانت المفاوضات مع الحكومة الحالية مستمرة منذ فترة طويلة ، والتي قمنا فيها بتقديم مطالبنا لها ، ومن أهمها : هو الافراج عن ثلاث من إخواننا.فتم تلبية هذه المطالب من قبل الحكومة على المراحل في مدة سنة كاملة .
وعندما تم الافراج عن أخونا الثالث " اظهار افضل " قامت حركة طالبان وفق العهد بإطلاق سراح أجمل خان .

شاهد الله شاهد
المتحدث الرسمي لحركة طالبان باكستان
(30،08، 2014)


------------------

پروفیسر اجمل خان کے بدلے تین اہم ساتھیوں کی رہائی

بسم اللہ الرحمن الرحیم

وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی پروفیسر اجمل خان صاحب کو تحریک طالبان پاکستان (حلقہ نوشہرہ ،صوابی،چاسدہ )کے تین اہم ساتھیوں کی رہائی کے بدلے رہا کر دیا ہے۔

پشاور اسلامیہ یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر اجمل خان گذشتہ چار سال سے تحریک طالبان پاکستان حلقہ نوشہرہ ،صوابی ،چارسدہ کے مجاہدین کی قید میں تھے،دوران اسیری اجمل خان صاحب کی صحت اور عمر کے پیش نظر انکے آرام کا پورا خیال رکھا گیا ،دستیاب وسائل کے حساب سے ادویہ اور مناسب خوراک وپوشاک کی فراہمی میں کوئی کمی پیدا نہیں ہونے دی ،شریعت کے مطابق قیدی کے حقوق پوراکرنا تحریک طالبان اپنی دینی ذمہ داری سمجھتی ہے۔

تحریک طالبان نے انکی رہائی کے بدلے حکومت سے اپنے پانچ ساتھیوں کی رہائی کا مطالبہ کیا تھا تاہم اے این پی حکومت نے محض خاندانی رقابتوں کی بنا پر وائس چانسلر صاحب کی رہائی میں کوئی دلچسپی نہیں دکھائی اور معاملے کو بلا وجہ طول دیا بلکہ مطالبے کی فہرست میں شامل دو ساتھیوں کو آئی ایس آئی کے ہاتھوں شہید کروا کر چانسلر صاحب کی زندگی کو خطرے میں ڈالنے کی دانستہ کوشش کی۔

اس دورا ن بعض غیر سرکاری لوگوں اور اجمل خان صاحب کے اہلخانہ کی طرف سے تحریک طالبان کو بھاری رقوم کے عوض اجمل خان صاحب کی رہائی کی پیشکش بھی کی گئی جسے ہم نے مسترد کیا کیونکہ اجمل خان صاحب کے معاملے کو تحریک طالبان خالصتا حکومت اور سرکار کا مسئلہ سمجھتی تھی جس میں خاندان اور اہلخانہ کو الجھانے کا اخلاقی جواز موجودنہیں تھا۔

موجودہ حکومت کی طرف سے کافی عرصے سےپروفیسر صاحب کی رہائی کے معاملے پر مذاکرات جاری تھے جس میں ہماری طرف سےسرفہرست تین ساتھیوں کی رہائی کا مطالبہ تھاجو ایک سال میں مرحلہ وار مکمل ہوا اور وعدے کے مطابق تحریک طالبان پاکستان نے تیسرے ساتھی اظہار افضل کی رہائی کے ساتھ ہی اجمل خان صاحب کو رہا کر دیا۔

شاہد اللہ شاہد
مرکزی ترجمان تحریک طالبان پاکستان
(۳۰؍۰۸؍۲۰۱۴)

No comments: