Saturday, November 9, 2013

Tehrik-i Taliban Pakistan Statement Eulogizing Hakimullah Mehsud & Announcing the Election of the New Amir, Maulana Fazlullah, & His Deputy, Khalid Haqqani


Statement from the Tehrik-e-Taliban Pakistan
On the Martyrdom of the Emir Hakimullah Mehsud, May Allah Have Mercy Upon Him,
And Appointing the New Emirs by the Higher Shura Council


بسم الله الرحمن الرحيم

Praise be to Allah, who said::


{Among the Believers are men who have been true to their covenant with Allah: of them some have completed their vow (to the extreme), and some (still) wait: but they have never changed (their determination) in the least} [Al-Ahzab: 23]

And may prayers and peace be upon the Messenger of Allah, who said:
"By Him in Whose Hand Muhammad's soul is, I love to fight in the way of Allah and get killed, to fight again and get killed and to fight again and get killed." (Muslim)

And who also said:
"That I kill in the name of Allah is dearer to me than following the people of urban, and suburban." (Al-Mustadrak) (Muslim)

We congratulate the Muslim Ummah for the martyrdom of the leader of leaders and the general of generals: the Emir / Hakimullah Mehsud, may Allah accept him.

In the evening of the day of blessed gathering, on Thul-Hijjah 26, 1434H, corresponding to November 1, 2013, our venerable Emir was martyred with 4 of his brothers (Wali al-Rahman, Saeed Allah, Jalaal, Wali Ba'adShah) and his uncle (Khayer Muhammed) when his car was bombed with three missiles while he was entering his home.

Here, we refute the news published by the news agencies speaking on behalf of the enemies of Islam about the martyrdom of the Deputy Emir Abdullah (Bahar) and the appointment of the new Emir for the Tehrik-e-Taliban Pakistan. We emphasize through this statement that the leader Abdullah (Bahar) was not at the scene of the attack and was not martyred.
Indeed, the martyrdom of the venerable Emir is a great tragedy for the Muslim Ummah, but the believers do not regret this martyrdom. Instead, they congratulate each other, and affirms to the Ummah of Muslims that its leadership does not die on mattresses. Rather, it honors the Ummah, and its victory is in the martyrdom of its leadership, because we are an Ummah that does not die with sacrifices but is victorious and alive because death gives it life.

The venerable Emir Hakimullah Mehsud had hoped for a humble martyrdom on the path of Jihad in the way of Allah. The Emirs did not take him along with them to Jihad in Afghanistan because of his young age because there was an order from the Emir of the Believers Mullah Umar al-Mujahid, may Allah protect him, that he who did not have a beard could not leave for Jihad. So when American launched the Crusader war and toppled the Islamic Emirate, our Emir began to offer services and shelter to the immigrants coming from Afghanistan, and he participated with his brothers in Jihadist operations against the American Crusader forces and the apostate Afghan army on the fronts of Paktia, Paktika, Khost, Nangarhar, and Kunar. Then, he left for central Afghanistan and participated in the fighting there on a number of Jihadist fronts.

And when the Pakistani forces engaged in military operations in the tribal areas to save the NATO forces from the attacks of the Mujahideen, then the leader Hakimullah Mehsud was one of principal founders of the Tehrik-e-Taliban Pakistan.

The founder of the Tehrik-e-Taliban Pakistan, Beitullah Mehsud the martyr, may Allah have mercy on him, appointed him the Emir of the districts of Mohmand, Orakzai, and Kurram Agency, where he began to play a prominent role in strengthening the Pakistani Jihad. And at that time, despite there being many difficulties, he courageously and in a beautiful manner firmly planted the feet of the Mujahideen in those regions.

And the Emir Hakimullah Mehsud engaged in devastating Jihadist operations to deter the aggression of the Pakistani army - which is an ally on the frontlines for the American Crusader war - on the tribal regions, and defeated their evil a number of times.

And the Emir Hakimullah Mehsud led the Mujahideen to launch devastating attacks on supply lines for the the Crusader NATO forces between Pakistan and Afghanistan, and cut off a number of times military supply lines and logistical support for the occupying American forces.

And when he saw the escalation of the activities of the refuting Shia against Islam in Kurram Agency, he struck them and tightened the noose around them. And as for the application of the Shariah in Orakzai Agency, all the credit goes to him.

After the martyrdom of the founder of the Tehrik-e-Taliban Pakistan, Beitullah Mehsud, may Allah have mercy on him, he was appointed the Emir of the Tehrik-e-Taliban Pakistan, and he lead the Mujahideen of the movement with stability and integrity. And he presented the importance of Jihad at the forefront and the consolidation of the idea of global Jihad and the Caliphate in the Mujahideen.

The venerable Emir did not engaged in great attacks on the American forces and their allies in Pakistan alone. Instead, the Martyr Mujahid Doctor Abu Dujanah al-Khurasani, may Allah have mercy on him, under his command and supervision engaged in the "Attack of Beitullah Mehsud, May Allah Have Mercy on Him," which resulted in the martyrdom operation at the American military base in Khost which caused the loss of senior officers in the American CIA.

And the Emir announced the targeting of the head of infidelity of America in their own home, and sent one of his Mujahideen Faisal Shahzad to Times Square in New York to carry out an operation targeting Americans.

He took revenge for the Imam of Jihad, the Sheikh Usama bin laden, may Allah have mercy on him, by sending sacrificing Mujahideen to target the Mehran military base and barracks in Karachi and military centers across the country.

When the enemies of Allah and their allies in the Pakistani regime were unable to chase him down by offering reward money or by assassinating him with drone attacks, these tyrants resorted to sorcery on him to stop the spread of Jihad under his leadership, causing headaches and severe pain in one's body, despite not suffering from any disease.

The Emir Hakimullah Mehsud, may Allah have mercy on him, has spent more than his life after leading the Emirate in strong sickness because of sorcery, despite not suffering from any disease.

In the last days of his life, he was treating himself with spiritual treatment from one of the Mujahid Arab Sheikhs, from which he improved, praise be to Allah. And he began once again to escalate Jihadist activities. And when the news was received from the apostate Pakistani government and America about him, in which he had finally been assassinated in a drone attack, now all the Pakistani regime claims is maintaining innocence, showing itself as a traitor deceiver who hold a knife under his arm and echoes from the mouth peace…peace…

So praise be to Allah that the Mujahideen did not become upset because of the martyrdom of the venerable Emir. Instead, they increased in discipline and determination to continue the Jihad to uphold the word of Allah.

Thus departed the Knight of Knights of Tawhid and Jihad and the General of Generals of the Islamic Ummah, who spent more than his life in fighting and Jihad, in order to make his departure and his martyrdom a light illuminating the path of Jihad for the believers, and a fire on the enemies of Allah, to continue the caravan of Jihad, spurring it on with firm faith and steady conviction with the promise of Allah, the Truth.

And thanks be to allah, the Mujahideen were not agitated due to the martyrdom of the good Emir, instead they increased in discipline and determination to continue jihad to raise Allah's word.

And we give the Muslim Umma in general and the Mujahideen especially the good tidings that the supreme Shura Council of the Taliban Pakistan movement has appointed the leader and mufti Sheikh Mawlana Fadl Allah may Allah preserve him as Emir of the movement, and the leader mufti Sheikh Khaled Haqqani may Allah preserve him as vice Emir, and who will continue Allah willing on the steps of the former Emir Hakim Allah Mahsoud may Allah have mercy upon him in escalating the journey of Jihad forward until the word of tawhid is the supreme one that was drawn for us by the Emirs and leaders with their perfumed blood.
So, glad tidings, our precious Ummah, the dawn of victory has emerged and it will defeat all of the enemies of Islam and turn their backs, with the permission of the Almighty One.

And we say to our Emir of the Believers Mullah Umar al-Mujahid, and our Sheikh Ayman al-Zawahiri, may Allah protect them, Islam will not be weakened by us. Indeed, we promise to Allah to move along the path of Jihad to liberate this region from the American occupation and its agent regime and establish Allah's Shariah on this land of Pakistan or perish without it.

We say to the enemies of Allah, the Americans and their allies, that the blood of our Emir Mullah Hakimullah Mehsud, may Allah have mercy on him, will not be wasted, and we will take revenge for him and his blood as soon as possible, with Allah's permission. This is a promise from us and a debt around our necks. We are not exempt nor released from it with Allah's permission until we fulfill it. The war between you and us is a rivalry, and you will see infidels with your own eyes the consequences and victory that will be for the Mujahideen of Islam.

And Allah hath full power and control over His affairs; but most among mankind know it not.

May Allah have mercy on the Mujahid Emir Mullah Hakimullah Mehsud and all his brothers who were martyred with him.


Allah is the Greatest


{But honour belongs to Allah and His Messenger, and to the Believers; but the Hypocrites know not.}

The Official Foundation for Production and Distribution
Umar Media
Tehrik-i-Taliban Pakistan





Saturday 09 Muharram, 1435 A.H
10/05/2013

_______________________________________

بسم الله الرحمن الرحيم


بيان هام من حركة طالبان باكستان
تحریک طالبان پاکستان کی طرف سے ایک اہم بیان
An Important Statement from Tehrik-i-Taliban Pakistan

بشأن استشهاد الأمير حكيم الله محسود رحمه الله
امیرحکیم اللہ محسود رحمہ اللہ کی شہادت
on the Martyrdom of the Emir Hakimullah Mehsud
May Allah Have Mercy upon Him

وتعيين مجلس الشورى العليا للأمراء الجدد
اورعالی مجلس شوری کا نئے امراء کی تقرری کی بابت
And the Appointing of the New Emirs by the Higher Shura Council

بيان هام بشأن استشهاد الأمير حكيم الله محسود رحمه الله
وتعيين مجلس الشورى العليا للأمراء الجدد


بسم الله الرحمن الرحيم

الحمدُ لله القائل: {مِنَ الْمُؤْمِنِينَ رِجَالٌ صَدَقُوا مَا عَاهَدُوا اللَّهَ عَلَيْهِ فَمِنْهُمْ مَنْ قَضَى نَحْبَهُ وَمِنْهُمْ مَنْ يَنْتَظِرُ وَمَا بَدَّلُوا تَبْدِيلًا} [الأحزاب : 23]

والصلاة والسلام على رسول الله القائل: "والذي نفس محمد بيده، لوددتُ أن أغزو في سبيل الله فأُقتل، ثم أغزو فأقتل، ثم أغزو فأقتل" (مسلم)

والقائل أيضًا: "لأن أقتل في سبيل الله أحب إلي من أن يكون لي أهل المدر والوبر" (المستدرك)

نهنئ الأمة المسلمة بمناسبة استشهاد قائد من قاداتها وجنرال من جنرالاتها؛ الأمير/ حكيم الله محسود، تقبله الله.

ففي ليلة الجمعة المباركة، في السادس والعشرين من ذي الحجة، من عام أربعة وثلاثين وأربعمائة وألف للهجرة، الموافق 1 نوفمبر 2013م؛ استشهد أميرنا المكرَّم مع أربعة من إخوانه(ولي الرحمن،سميد الله،جلال ، ولي بادشاه) وعمِّه (خير محمد)عندما قُصفت سيارته بثلاثة صواريخ أثناء دخوله بها إلى منزله.

ونحن هنا نُكذِّب الأنباء المنشورة في وسائل الإعلام الناطقة بلسان أعداء الإسلام عن استشهاد النائب الأمير عبد الله (بهار) . ونُؤكد عبر هذا البيان أن القائد عبد الله (بهار)لم يكن موجودًا في مكان الهجوم وأنه لم يستشهد.

إن شهادة الأمير المكرم لهي مأساةٌ كبيرةٌ للأمة المسلمة، لكن المؤمنين لا يتأسَّفون على هذه الشهادة بل يهنئون بعضهم بها، وذلك شأنُ أمة المسلمين؛ أن قادتها لا يموتون على الفُرُش، بل مَكرمة الأمة وانتصارها هو في استشهاد قادتها، لأننا من أمة لا تموتُ بالتضحيات بل تنتصر وتعيش وتحيا؛ لأن الموت عندها حياة.

إن الأمير المكرم حكيم الله محسود كان يتمنى الشهادةَ منذ الصغر عن طريق الجهاد في سبيل الله، وبسبب صغر سنه وقتها كان الأمراءُ لا يصطحبونه معهم إلى الجهاد في أفغانستان؛ فأوامر أمير المؤمنين الملا عمر مجاهد -حفظه الله- أن من لم تنبت لحيته لا يخرج إلى الجهاد. وعندما شنت أمريكا الهجمة الصليبية وسقطت الإمارة الإسلامية قام أميرنا بتقديم الخدمات وإيواء المهاجرين القادمين من أفغانستان، كما شارك مع إخوانه في العمليات الجهادية ضد القوات الأمريكية الصليبية والجيش الأفغاني المرتد على جبهات بكتيا، وبكتيكا، وخوست، وننغرهار، وكونار، ثم ذهب إلى وسط أفغانستان وشارك في القتال هناك في عدة جبهات جهادية.

وعندما قامت القوات الباكستانية بالعملية العسكرية في مناطق القبائل لإنقاذ قوات الناتو من هجمات المجاهدين فإن القائد حكيم الله محسود كان أحد المؤسسين الرئيسيين لحركة طالبان باكستان.

وقد قام مؤسس حركة طالبان باكستان بيت الله الشهيد -رحمه الله- بتعيينه أميرًا على مقاطعات مهمند، وأوركزائي، وكرم ايجنسي، حيث قام بأداء دور بارز في تقوية الجهاد الباكستاني. وفي ذلك الوقت ورغم وجود الصعوبات الكثيرة فقد قام بشجاعة وجرأة وأسلوب مميز بترسيخ أقدام المجاهدين في تلك المناطق.

وقام الأمير حكيم الله محسود بعمليات جهادية قاصمة لردع عدوان الجيش الباكستاني -الذي هو الحليف والخط الأمامي في الحرب الصليبية لأمريكا- في أرض القبائل، وهزمهم عدة مرات شر هزيمة.

وقاد الأمير حكيم الله محسود المجاهدين لشن الهجمات المدمرة على خطوط التموين المارة من باكستان إلى أفغانستان لقوات حلف شمال الأطلسي الصليبية، وقطع عدة مرات خطوط الإمداد العسكري واللوجستي للقوات الأمريكية المحتلة.

وعندما رأى تصاعدَ أنشطة الروافض الشيعة ضد الإسلام والمجاهدين في مقاطعة كرم ايجنسي؛ شنَّ الغارات القوية عليهم وشدد الخناق حولهم. وأما ما تم من تطبيق للشريعة في مقاطعة أوركزئي ايجنسي فكل الفضل يعود إليه بتوفيق الله عز وجل وفضله.

وبعد استشهاد المؤسس لحركة طالبان باكستان بيت الله مسعود -رحمه الله- تم تعيينه أميرًا لحركة طالبان باكستان، فقاد مجاهدي الحركة بثباتٍ واستقامة، وقام بتصعيد مسيرة الجهاد إلى الأمام، وترسيخ فكرة الجهاد العالمي والخلافة في المجاهدين؛ فالأمير المكرم لم يقم بهجمات قاسية على القوات الأمريكية وحلفائها في باكستان فقط، بل تحت إمرته وإشرافه قام المجاهدُ الشهيد الدكتور أبو دجانة الخراساني -رحمه الله- بـغزوة "بيت الله محسود رحمه الله" والتي أدى فيها عملية استشهادية على القاعدة العسكرية الأمريكية في خوست أسفرت عن هلاك كبار ضباط الاستخبارات المركزية الأمريكية سي آي إيه.

وقد أعلن الأمير عن استهداف رأس الكفر أمريكا في عقر دارها، وأرسل أحد مجاهديه فيصل شهزاد إلى تايم سكوير بنيويورك لأداء عملية تستهدف الأمريكيين.

وقام بأخذ الثأر لإمام الجهاد الشيخ أسامة بن لادن -رحمه الله- بإرساله الفدائيين المجاهدين لاستهداف القاعدة العسكرية مهران في كراتشي والثكنات والمراكز العسكرية في أنحاء البلاد.

وعندما عجز أعداء الله أمريكا وحليفها النظام الباكستاني عن مطاردته بوضع الجوائز المالية، ومحاولات اغتياله بهجمات الطائرات بدون طيار؛ لجأ هؤلاء الطواغيت إلى عمل السِّحر ضده لإيقاف تصاعد المد الجهادي الذي ينتشر تحت قيادته، مما أصابه بصداع وألم شديد في جسمه.
ولقد قضى الأمير حكيم الله محسود -رحمه الله- أكثر حياته بعد تولى الإمارة معانيًا من المرض الشديد بسبب السحر، مع أنه لم يكن يعاني قبلها من أي مرض. وفي الأيام الأخيرة من حياته قام بمعالجة نفسه عند أحد الشيوخ العرب المجاهدين بالعلاج الروحاني، مما أدى إلى تحسن حالته بحمد الله كثيرًا، وبدأ مرة ثانية بتصعيد النشاطات الجهادية، وعندما وصل الخبر إلى الحكومة الباكستانية المرتدة وأمريكا اغتالوه بهجمات الطائرة بدون طيار. وكل ما يدَّعيه النظام الباكستاني الآن من تصنع للبراءة يطابق حال ذلك المخادع الخائن الذي يحمل السكين تحت الإبط ويردد بالفم: السلم.. السلم..

وهكذا رحل فارس من فرسان التوحيد والجهاد، وجنرال من جنرالات الأمة الإسلامية، الذي قضى أكثر عمره في القتال والجهاد، ليجعل من رحيله وشهادته نورًا ينير طريق الجهاد للمؤمنين ونارًا على أعداء الله، ولتستمر قافلة الجهاد يحدوها إيمان راسخ ويقين ثابت بوعد الله الحق.

وبحمد لله فإن المجاهدين لم يضطربوا بسبب شهادة الأمير المكرم بل ازدادوا انضباطًا وعزمًا على مواصلة الجهاد لإعلاء كلمة الله.

ونبشر الأمة المسلمة عامة والمجاهدين خاصة أن مجلس الشورى العليا التابعة لحركة الطالبان باكستان قامت بتعيين القائدوالمفتي الشيخ مولانا فضل الله حفظه الله أميرا للحركة، والقائد المفتي الشيخ خالد حقاني حفظه الله نائب الأمير ، واللذان سيمضون بإذن الله على خطى الأمير السابق حكيم الله محسود رحمه الله في تصعيد مسيرة الجهاد إلى الأمام حتى تكون كلمة التوحيد هي العليا التي رسمه لنا الأمراء والقادة بدمائهم الزكية.

فأبشري يا أمتنا الغالية، لقد لاح فجر النصر وسيهزم جمع أعداء الإسلام ويولون الأدبار بإذن الواحد القهار.

ونقول لأمير المؤمنين الملا عمر مجاهد وشيخنا أيمن الظواهري -حفظهما الله- : لن يؤتى الإسلام بإذن الله من قبلنا، وإننا نعاهدُ الله على المضي في طريق الجهاد لتحرير هذه المنطقة من المحتل الأمريكي وأنظمته العميلة، وإقامة شرع الله على أرض باكستان أو نهلك دون ذلك.

ونقول لأعداء الله أمريكا وحلفائها: إن دماء أميرنا الملا حكيم الله محسود -رحمه الله- لن تذهب هدرًا، وسنأخذ الثأر له ولدمائه في أسرع وقت بإذن الله، وهذا عهدٌ علينا ودينٌ في أعناقنا، لا نقيل ولا نستقيل منه بإذن الله حتى نؤديه. فالحرب بيننا وبينكم سجال، وسترون أيها الكفار بأم أعينكم أن العاقبة والفوز سيكون لمجاهدي الإسلام.

والله غالب على أمره ولكن أكثر الناس لا يعلمون.

رحم الله الأمير المجاهد الملا حكيم الله محسود وجميع إخوانه الذين استشهدوا معه .

الله أكبر

{وَلِلَّهِ الْعِزَّةُ وَلِرَسُولِهِ وَلِلْمُؤْمِنِينَ وَلَكِنَّ الْمُنَافِقِينَ لا يَعْلَمُونَ}

المُؤسَّسةُ الرَسْمِيةُ للِإنْتَاجِ والْنشر
مُؤسَّسةُ عُمر للإنتَاج الإعلامِي
حَركةُ طالبان باكستان




السبت 6 محرم 1435 هــ
09/11/2013

المصدر : (مركز صدى الجهاد للإعلام)
الجبهة الإعلامية الإسلامية العالمية
رَصدٌ لأَخبَار المُجاهِدين وَ تَحريضٌ للمُؤمِنين
________________

امیر حکیم اللہ محسود رحمہ اللہ کی شہادت اور نئے امراء کی تقرری کی بابت اہم بیان

بسم الله الرحمن الرحيم

تمام تعریفیں اللہ تعالی کے لیے ہیں، جس نے فرمایا:

’’ مومنوں میں سے کتنے ایسے جواں مرد ہیں جنہوں نے سچ کر دکھایا وہ عہد جو اللہ سے کیا تھا، پس ان میں سے کوئی (تو شہادت پا کر) اپنی نذر پوری کر چکا ہے اور ان میں سے کوئی (اپنی باری کا) انتظار کر رہا ہے، مگر انہوں نے (اپنے عہد میں) ذرا بھی تبدیلی نہیں کی۔‘‘(احزاب:23)

درود وسلام ہوں، اللہ کے رسول ﷺ پر جنہوں نے فرمایا:

’’اس ذات کی قسم! جس کے ہاتھ میں میں محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی جان ہے۔ میں پسندکرتاہوں کہ میں اللہ کے راستہ میں جہاد کروں پھر مجھے قتل کردیا جائے، پھر جہاد کروں پھر قتل کردیا جاؤں، پھر جہاد کروں پھر مجھے قتل کردیا جائے۔‘‘

مزید فرمایا:

’’اللہ کے راستے میں قتل ہونا مجھے زیادہ محبوب ہے اس سے کہ میرے لیے اہل شہر وبیابان(پختہ گھروں اور خیموں میں رہنے والے)ہوں۔‘‘

امت مسلمہ کو اس کے قائدین میں سے ایک قائد اور جرنیلوں میں سے ایک جرنیل ؛ امیر /حکیم اللہ محسود تقبلہ اللہ کی شہادت مبارک ہو۔

بمورخہ ۲۶ ذوالحجہ ۱۴۳۴بمطابق یکم نومبر ۲۰۱۳ جمعۃ المبارک کو شام کے وقت امیر محترم کی گاڑی پر اس وقت ۳ میزائل فائر کیے گئے ،جب آپ کی گاڑی گھر میں داخل ہو رہی تھی۔اس حملے میں آپ کے ساتھ پانچ ساتھی(ولی الرحمان،سمیداللہ،جلال،ولی بادشاہ) بھی شہید ہوئے،جن میں آپ کے چچا(خیر محمد) بھی شامل تھے۔

یہاں ہم دشمنان اسلام کی زبان بولنے والے میڈیا اداروں کی ان خبروں کی تردید کرتے ہیں جن میں کہا گیا کہ اس حملے میں امیر محترم کے نائب عبداللہ (بہار) بھی شہید ہوگئے ہیں۔

ہم اس بیان کےذریعے سے ان جھوٹی خبروں کی تردیدکرتے ہوئے بتاتے ہیں کہ کمانڈر عبداللہ (بہار) حملے کے وقت جائے وقوعہ پرموجود نہیں تھے اور وہ شہید نہیں ہوئے ہیں۔

امیر محترم کی شہادت امتِ مسلمہ کے لئے ایک عظیم سانحہ ہے،لیکن مؤمنین ان شہادتوں پر دکھ نہیں کرتے بلکہ ایک دوسرے کو مبارک باد دیتے ہیں کیونکہ یہی مسلمانوں کی امت کی شان ہے کہ اس کے قائدین بستروں پر فوت نہیں ہوتے ہیں ۔ امت کی عزت وکامرانی اس کے قائدین کے شہید ہونے میں ہے کیونکہ ہم ایسی امت ہیں جو کبھی قربانیوں سے مرتی نہیں بلکہ زندہ اور کامیاب ہوکر جیتی ہے، اس وجہ سے کہ اس امت کے نزدیک موت ہی زندگی ہے۔

پھر امیر محترم حکیم اللہ محسود کی بچپن سے ہی اللہ کی راہ میں جہاد کرکے شہادت پانے کی آرزو تھی۔ آپ کی کم سنی کی وجہ سے امراء آپ کو اپنے ساتھ افغانستان میں جہاد کے لیے نہیں لے کرجاتے تھے کیونکہ امیر المؤمنین ملا عمر مجاہد حفظہ اللہ کا حکم تھا کہ جس کی داڑھی نہیں نکلی ہے، وہ جہاد کے لیے نہیں نکلے۔ پھر امریکہ نے صلیبی جنگ برپا کرکے امارت اسلامیہ کا سقوط کیا تو آپ نے جہاں افغانستان سے آنے والی مہاجرین کو پناہ اور ان کی خدمت کیں، وہاں آپ نے امریکی صلیبی فورسز اور افغان مرتد فوج کیخلاف پکتیا، پکتیکا، خوست، ننگرہار اور کنڑ میں ہونے والی جہادی کارروائیوں میں حصہ لیا اور پھر افغانستان کے اندرجا کر بھی مختلف محاذوں پر جہاد کیا۔

پھرجب پاکستانی فورسز نے نیٹو صلیبی افواج کو مجاہدین کے حملوں سے بچانے کے لیے قبائلی علاقوں میں فوجی آپریشن شروع کیا تو آپ تحریک طالبان پاکستان کے بانی رہنماؤں میں شامل تھے۔

آپ کو بانی تحریک طالبان پاکستان بیت اللہ مسعود شہیدؒ نے مہمند،اورکزئی اور کرم ایجنسی کا مشترکہ امیر مقرر کیا، جہاں آپ نے جہاد پاکستان کو مضبوط کرنے میں بنیادی کردار ادا کیااور اس دور میں بے پناہ مشکلات کے باوجود آپ نے نہایت دلیری اور خوش اسلوبی سے کے ساتھ ان علاقوں میں مجاہدین کو مستحکم کیا۔

آپ نے صلیبی جنگ میں امریکہ کی فرنٹ لائن اتحادی بننے والی پاکستانی فوج کی قبائل کی سرزمین پر ہونے والی جارحیت کا منہ توڑ جواب دیتے ہوئے زبردست جہادی کارروائیاں کرکے انہیں کئی بار ذلت آمیز شکست سے دوچار کیا۔

آپ نے پاکستان سے افغانستان جانے والی صلیبی نیٹو افواج کی سپلائی لائن پر اپنے مجاہدین کی قیادت کرتے ہوئے تباہ کن حملے کیے اورکئی بار قابض امریکی فوج کی لاجسٹک اورفوجی امدادی سپلائی لائن کو کاٹ کررکھ دیا۔

پھر جب کرم ایجنسی میں رافضی شیعوں کی اسلام اورمجاہدین کیخلاف بڑھتی سرگرمیوں کو دیکھاتو آپ نے ان پرطوفانی یلغار شروع کرتے ہوئے ان پر حالات تنگ کر دیئے۔ اس کے علاوہ اورکزئی ایجنسی میں شریعت کے نفاذ کا عمل بھی آپ کے مرہونِ منت ہے۔

پھر جب بانی تحریک طالبان پاکستان محترم بیت اللہ مسعود شہید رحمہ اللہ کے بعد تحریک طالبان پاکستان کے امیر مقرر ہوئے ،آپ اپنی امارت کے دوران نہایت استقامت کے ساتھ تحریک کے مجاہدین کو سنبھالا اور جہاد کے مشن کو آگے لے کر گئےاورمجاہدین میں عالمی جہاد اور خلافت کے تصور کو بھی پھونکا۔

امیر محترم نے صرف پاکستان میں ہی امریکی فوج اور اس کے اتحادیوں پر زبردست حملے نہیں کیے بلکہ آپ ہی کی قیادت وسرپرستی میں میں مجاہد ڈاکٹرابو دجانہ خراسانی شہیدؒ نے ’’غزوئے بیت اللہ مسعودؒ‘‘کو انجام دیتے ہوئے خوست میں امریکی فوجی اڈے پر شہیدی حملہ کرکے امریکی مرکزی انٹیلی جنس سی آئی اے کے اعلی فوجی افسران کو ہلاک کیا ۔

اسی طرح آپ نے کفر کے سرغنہ امریکہ کو اس کے گھر کے بیچ میں ہی نشانہ بنانے کااعلان کیا اور اپنے ایک مجاہد فیصل شہزاد کو بھیج کر نیویارک ٹائم اسکوائر میں امریکیوں کو نشانہ بنانے والی کارروائی انجام دی۔

امام جہاد شیخ اسامہ بن لادن رحمہ اللہ کی شہادت کا انتقام لیتے ہوئے آپ نے اپنے فدائی مجاہدین روانہ کرکے کراچی میں واقع مہران ایئر بیس سمیت ملک بھر میں کئی فوجی اڈوں اورمراکز کو نشانہ بنایا۔

پھر جب اللہ کے دشمن امریکہ اور اس کی اتحادی پاکستانی حکومتی نظام آپ کے سر کی قیمتیں رکھ کر تعاقب کرنے میں ناکام، ڈرون حملوں سے شہید کرنے میں عاجز آگئیں تو آپ کی قیادت میں بڑھتے ہوئے جہاد کو روکنے کے لیے ان طواغیت نے آپ پر جادو کرایا جس کی وجہ سے آپ نے اپنی امارت کا اکثر حصہ سخت بیماری کی حالت میں گزارا۔

حالانکہ آپ کو کوئی مرض بھی لاحق نہیں تھا،صرف ہر وقت آپ کے جسم میں تکلیف اور درد رہتا تھا،جس کا آپ نے زندگی کے آخری ایام میں ایک بزرگ عرب مجاہد سے روحانی علاج کروایا اور الحمدللہ آپ کافی حد تک ٹھیک بھی ہوگئے تھے،اور پھر سے آپ نے اپنی جہادی سرگرمیوں کو بہت ہی زیادہ تیز کر دیا تھا ۔جس کی بھنک پڑتے ہی،مرتد پاکستانی حکومت اور امریکہ نے آپ کو ٹارگٹ کرنے کا فیصلہ کیا، اور بالآخر آپ کو ڈرون حملے میں شہید کردیا،اگرچہ پاکستانی حکومت معصوم بنتے ہوئے جو کچھ کہہ رہی ہے وہ بغل میں چھری ،منہ پہ رام رام کے مصداق ہے۔

اس طرح اپنی زندگی کا اکثرحصہ جہاد وقتال میں گزارنے والا توحید اور جہاد کے شہسواروں میں سے ایک شہسوار اوراسلامی امت کے جرنیلوں میں سے ایک جرنیل اس حالت میں چلیں گئے ہیں کہ آپ کا چلے جانا مومنین کے لیے راہ جہاد کی طرف رہنمائی کرنے والا نور بن چکا ہے جبکہ اللہ کے دشمنوں کے لیے آگ ثابت ہوگا۔ جہاد کا قافلہ پختہ ایمان اور اللہ کے برحق کامیابی کے وعدے کے ساتھ چلتا رہے گا۔

الحمد للہ مجاہدین امیر محترم کی شہادت کی وجہ سے پریشان ہونے کی بجائے اللہ کے کلمہ کی سربلندی کے لیے جہاد کوجاری رکھنے کی خاطر اور بھی منظّم اور پرعزم ہو گئے ہیں ۔

ہم امت مسلمہ کو عمومی طور پر اور مجاہدین کو خصوصی طور پر یہ خوشخبری دیتے ہیں کہ تحریک طالبان کی عالی مجلس شوری نے کمانڈر مفتی مولانا فضل اللہ حفظہ اللہ کو امیر اورکمانڈر مفتی شیخ خالد حقانی حفظہ اللہ کو نائب امیر مقرر کیا ہے، جو اللہ کے حکم سے اپنے سابق امیر حکیم اللہ محسود کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اس جہاد کے مشن کو آگے بڑھائینگے جسے قائدین اور امراء نے کلمہ توحید کی سربلندی کے لیے اپنے پاکیزہ خون سے سینچا ہے۔

پس ہماری گرامی قدرامت کے لیے خوشخبری ہے کہ کامیابی کی صبح طلوع ہونے کو ہے جبکہ ایک اللہ نہایت غالب کی مدد سے عنقریب دشمنان اسلام کا گروہ شکست سے دوچارہوگااور وہ پیٹھ پھیر کر بھاگیں گے۔

ہم اپنے امیر المومنین ملاعمر مجاہد اوراپنے شیخ ایمن الظواہری حفظہما اللہ کو یہ اطمینان دلاتے ہیں کہ ہماری طرف سے کبھی اسلام کیخلاف کوئی بڑھ نہیں سکے گا۔ ہم اللہ تعالی کوگواہ بناکر کہتے ہیں کہ ہم جہاد کی راہ پرچلتے رہینگے یہاں تک کہ اس خطے کو قابض امریکی اور اس کی ایجنٹ نظاموں سے آزاد کرالیں اور اس سرزمین پاکستان پر اللہ کی شریعت نافذ کرلیں یا پھر اس راہ میں لڑتے ہوئے جام شہادت نوش کرلیں۔

ہم اللہ کے دشمن امریکہ اوراس کے اتحادیوں سے کہتے ہیں کہ ہمارے امیر ملا حکیم اللہ محسود رحمہ اللہ کا خون کبھی رائیگاں نہیں جائے گا، ہم عنقریب جلد ہی اللہ کے حکم سے ان کا اور ان کے خون کا انتقام لینگے۔یہ ہمارا اپنے آپ سے عہد اور ہماری گردنوں پر موجود قرض ہے، ہم اسے ادا کرنے تک اللہ کے حکم سے نہ اس سے دستبردارہونگے اور نہ ہی اسے معاف کریں گے۔پس جنگ میں ایک ڈول کبھی ہم پر اور کبھی تم پر پڑتا ہے لیکن عنقریب تم کافر لوگ اپنی آنکھوں سے دیکھ لوں گے کہ نتیجہ اور کامیابی مجاہدین اسلام ہی کے حق میں ہوگا۔

اللہ اپنے حکم کو پورا کرنے پر غالب ہے لیکن اکثر لوگ نہیں جانتے ہیں۔

اللہ تعالی مجاہد امیر ملا حکیم اللہ محسود اور ان کے ساتھ شہید ہونے والے تمام بھائیوں کی شہادت قبول فرمائے۔

جفا کی تیغ سے گردن وفا شعاروں کی
بر سرِمیدان کٹی تو ہے ،جھکی تو نہیں


والله أكبر

{وَلِلَّهِ الْعِزَّةُ وَلِرَسُولِهِ وَلِلْمُؤْمِنِينَ وَلَكِنَّ الْمُنَافِقِينَ لا يَعْلَمُونَ}
‘‘عزت تو اللہ ، اس کے رسول اور مؤمنین کے لیے ہیں لیکن منافقین نہیں جانتے’’

مرکزی ادارہ برائے نشرواشاعت
عمر میڈیا
تحریک طالبان پاکستان



ہفتہ 06/01/1435
09/11/2013
_____________________










Maulana Fazlullah

No comments: